Urdu,  ادب,  شاعری

اب تو اک خواب ہوا اذنِ بیاں کا موسم

اب تو اک خواب ہوا اذنِ بیاں کا موسم
جانے کب جائے گا، یہ شورِ اذاں کاموسم

حاکم وقت ہوا، حاکمِ فطرت شاید
ان دنوں شہر میں، نافذ ہے خزاں کا موسم

حکمِ قاضی ہے کہ ماضی میں رکھا جائے ہمیں
موسمِ رفتہ رہے عمر رواں کا موسم

نمِ بادہ کا نہیں نام و نشاں اور یہاں
ہے شرر بار فقیہوں کی زباں کا موسم

کعبۂ دل پہ ہے پیرانِ حرم کی یلغار
ہائے اے پیر مغاں! تیری اماں کا موسم

بند ہیں دید کے در، وا نہیں امید کے دَر
ہے یہ دل شہر میں، خوابوں کے زیاں کا موسم

اک نہیں ہے کہ ترے لب سے سنی جاتی ہے
جانے کب آئے گا ظالم تری ہاں کا موسم

وا نہ کر بند قبا، یاں کی ہوا میں اپنے
بتِ سرمست! مسلمان ہے یاں کا موسم

رنگ سرشار نہ ہوجائے فضا تو کہنا
آئے تو مستی خونیں نفساں کا موسم

جون ایلیا

Leave a Reply