kalam e muattar
Urdu,  ادب,  بلاگ,  شاعری

آہ وہ چھپ چھپ کہ مسکرا دینا

آہ! وہ چھپ چھپ کہ مسکرا دینا

طنز کر کے مجھے جلا دینا

یہ ساحری ہے تیری زلفوں کی

کچھ کو ظاہر کچھ کو چھپا دینا

ضط کر لوں اگر یہ آنسو میں

مجھے چھپکے سے پھر رولا دینا

مجھ سے بچھڑے ہوئے سب یادوں کو

اے میرے دل! اب کے بھلا دینا

میری نشانیاں رکھو نہ پاس

جانِ من! اب اُنہیں مٹا دینا

میری خموشی، اپنے لفظوں کو

کچھ معطر کو بھی سمجھا دینا

جانِ من! اب مجھے بھلا دینا

مخزنِ درد

Leave a Reply