Blog Literature Urdu

مجھ سے مل کر بھی اجنبی ہی رہا

مجھ سے مل کر بھی اجنبی ہی رہا

ذکرِ فردا میں شرابی ہی رہا

وہ جو میکش تھے پیاسے مرنے لگے

سارا جہان گلابی ہی رہا

آس جب ٹوٹتی نہیں اپنی

جانے کب اس کی آرزو میں رہا

وہی مشک و عنبر کی بات کرو

جامِ جم توڑ کے خوشبو میں رہا

اے خیالوں سے پرے وہم و گماں

کب سے میں محفلِ ساقی میں رہا

آبھی جا! شورشِ دل کے قرار

جانے اب کب سے میں خاکی میں رہا

شعلہِ دہر کے جھلسے ہوئے دل

خواب سے پُر دلِ باغی میں رہا

نیمہِ شب ہے یہ فغاں کیونکر

سحرِ فریبِ دل ہستی میں رہا

یوں معطؔر کی زندگی لوٹیں

خواب سے کب اُٹھے، راضی میں رہا

Last Updated on April 15, 2021 by ANish Staff

Leave a Reply