Blog Literature Urdu

دل کسی باوفا کی بات کرے

دل کسی باوفا کی بات کرے

دشت میں یادِ خرابات کرے

پھر وفا زیست کی راہوں میں گم

روشنی بیخودی کی بات کرے

ہست و بود یوں دیوانہ وار فضا

شامِ غم دلنشیں کی بات کرے

یوں بھی محفل سراب جیسی ہے

کیا خرابے میں کوئی رات کرے

تابِ اظہار زندگی کا بھرم

روشنی گل نما کی بات کرے

پھر سے روشن ہوا خرابۂِ من

زندگی، رندِ خرابات کرے

میرے خوابیدہ چمن زار وطن

کون پرہیزِ خُرافات کرے

Leave a Reply

Ready to get started?

Are you ready
Get in touch or create an account.

Get Started