Urdu,  ادب,  شاعری

تمہیں پتا ہے

تمہیں پتا ہے

کہ زندگی کے

تمام غم بھی

تیرے ستم بھی

تو سہہ لیے ہیں

تمہاری خاطر جہاں سے، خُود سے

الگ رہا ہوں، جُدا رہا ہوں

سدا سے یوں ہی میں بس جیا ہوں

میں سوچتا ہوں، یہ دیکھتا ہوں

ازل سے خوابوں کے تعاقب میں

سرگرداں ہوں

تمہیں پتا ہے؟

میں زندگی سے، اسکی ہر خوشی سے

تہی دامن کھڑا ہوا ہوں

یہ میری سانسیں جو چل رہی ہیں

میرے جہاں میں تیری کمی ہے

میں زندگی سے الجھ چکا ہوں

میں تیری خُواہش پہ مر چکا ہوں

تمہیں پتا ہے؟

کہ روشنی نے

مجھے اندھیروں کا عادی کرکے

مجھے پاتال میں اتارا

میرے سمجھ نے کسی کی خاطر

مجھے اک دلدل میں لا اتارا

میں سوچتا ہوں

کہ انتہا میں

یہ درد کچھ تو سنوار دے گا

مجھے نگاہوں کا جال دے گا

تمہیں پتا ہے؟

ناتمام

Leave a Reply