Blog Poetry

تن، ہجر میں اُس یار کے رنجُور ہُوا ہے

تن، ہجر میں اُس یار کے رنجُور ہُوا ہے
بے طاقتیِ دِل کو بھی مقدُور ہُوا ہے

پُہنچا نہیں کیا سمعِ مُبارک میں مِرا حال
یہ قصّہ تو اِس شہر میں مشہوُر ہُوا ہے

بے خوابی تیری آنکھوں پہ دیکھوں ہُوں، مگر رات!
افسانہ مِرے حال کا مذکوُر ہُوا ہے

کل صُبح ہی مستی میں سَرِراہ نہ آیا
یاں آج مِرا شیشۂ دِل چوُر ہُوا ہے

کیا سُوجھے اُسے، جس کے ہو یوُسفؑ ہی نَظر میں
یعقوبؑ بَجا آنکھوں سے معذُور ہُوا ہے

پُر شور سے ہے عِشق مغنی پسراں کے
یہ کاسۂ سر، کاسۂ طنبوُر ہُوا ہے

تلوار لیے پِھرنا تو اب اُس کا سُنا میں
نزدیک مِرے، کب کا یہ سر دُور ہُوا ہے

خُورشِید کی محشر میں طَپش ہو گی کہاں تک
کیا، ساتھ مِرے داغوں کے، محشوُر ہُوا ہے

اے رشکِ سَحر ! بزم میں لے مُنھ پہ نقاب اب
اِک شمع کا چہرہ ہے سو بے نوُر ہُوا ہے

اُس شوق کو ٹک دیکھ، کہ چشم ِنگراں ہے
جو زخم ِجِگر کا مِرے ناسوُر ہُوا ہے

Ready to get started?

Are you ready
Get in touch or create an account.

Get Started