Ghazlyat e Mir taqi mir
Classic,  Literature,  Urdu,  ادب,  شاعری

Ghazalyat e Mir

یہ حسرت ہے مروں اس میں لیے لبریز پیمانا

مہکتا ہو نپٹ جو پھول سی دارو سے میخانا

نہ وے زنجیر کے غل ہیں نہ وے جرگے غزالوں کے

مرے دیوان پن تک ہی رہا معمور ویرانا

مرا سر نزع میں زانو پہ رکھ کر یوں لگا کہنے

کہ اے بیمار میرے تجھ پہ جلد آساں ہو مر جانا

نہ ہو کیوں ریختہ بے شورش و کیفیت و معنی

گیا ہو میرؔ دیوانہ رہا سوداؔ سو مستانا

Leave a Reply