Blog Poetry

دلِ ناداں تُجھے ہُوا کیا ہے

دلِ ناداں تُجھے ہُوا کیا ہے​
آخر اِس درد کی دوا کیا ہے​

ہم ہیں مُشتاق اور وہ بیزار​
یا الہٰی یہ ماجرا کیا ہے​

میں بھی منْہ میں زبان رکھتا ہوں​
کاش پُوچھو، کہ مُدّعا کیا ہے​

جب کہ تُجھ بِن نہیں کوئی موجُود​
پھر یہ ہنگامہ، اے خُدا کیا ہے​

یہ پری چہرہ لوگ کیسے ہیں​
غمزہ وعشوہ و ادا کیا ہے​

سبزہ و گُل کہاں سے آئے ہیں​
ابْر کیا چیز ہے، ہَوا کیا ہے​

ہم کو اُن سے وفا کی ہے اُمیّد​
جو نہیں جانتے وفا کیا ہے​

ہاں بَھلا کر تِرا بَھلا ہو گا​
اور درویش کی صدا کیا ہے​

جان تم پر نِثار کرتا ہوں​
میں نہیں جانتا دُعا کیا ہے​

میں نے مانا کہ کچُھ نہیں غالب​
مُفت ہاتھ آئے تو بُرا کیا ہے​

Ready to get started?

Are you ready
Get in touch or create an account.

Get Started