sunset
Classic,  Literature

Ghazlyat e Mir

Spread the love

نالۂ عجز نقص الفت ہے

رنج و محنت کمال راحت ہے

عشق ہی گریۂ ندامت ہے

ورنہ عاشق کو چشم خفت ہے

تا دم مرگ غم خوشی کا نہیں

دل آزردہ گر سلامت ہے

دل میں ناسور پھر جدھر چاہے

ہر طرف کوچۂ جراحت ہے

رونا آتا ہے دم بدم شاید

کسو حسرت کی دل سے رخصت ہے

فتنے رہتے ہیں اس کے سائے میں

قد و قامت ترا قیامت ہے

نہ تجھے رحم نے اسے ٹک صبر

دل پہ میرے عجب مصیبت ہے

ق

تو تو نادان ہے نپٹ ناصح

کب موثر تری نصیحت ہے

دل پہ جب میرے آ کے یہ ٹھہرا

کہ مجھے خوش دلی اذیت ہے

رنج و محنت سے باز کیونکے رہوں

وقت جاتا رہے تو حسرت ہے

کیا ہے پھر کوئی دم کو کیا جانو

دم غنیمت میاں جو فرصت ہے

ق

تیرا شکوہ مجھے نہ میرا تجھے

چاہیے یوں جو فی الحقیقت ہے

تجھ کو مسجد ہے مجھ کو میخانہ

واعظا اپنی اپنی قسمت ہے

ایسے ہنس مکھ کو شمع سے تشبیہ

شمع مجلس کی رونی صورت ہے

باطل السحر دیکھ باطل تھے

تیری آنکھوں کا سحر آفت ہے

ابرتر کے حضور پھوٹ بہا

دیدۂ تر کو میرے رحمت ہے

گاہ نالاں طپاں گہے بے دم

دل کی میرے عجب ہی حالت ہے

کیا ہوا گر غزل قصیدہ ہوئی

عاقبت قصۂ محبت ہے

ق

تربت میرؔ پر ہیں اہل سخن

ہر طرف حرف ہے حکایت ہے

تو بھی تقریب فاتحہ سے چل

بخدا واجب الزیارت ہے

Leave a Reply

%d bloggers like this: