Ghazlyat e Mir taqi mir
Classic,  Literature,  Urdu,  ادب,  شاعری

Ghazlyat e Mir

یعقوبؑ کے نہ کلبۂ احزاں تلک گئے

سو کاروان مصر سے کنعاں تلک گئے

بارے نسیم ضعف سے کل ہم اسیر بھی

سناہٹے میں جی کے گلستاں تلک گئے

رہنے نہ دیں گے دشت میں مجنوں کو چین سے

گر ہم جنوں کے مارے بیاباں تلک گئے

کو موسم شباب کہاں گل کسے دماغ

بلبل وہ چہچہے انھیں یاراں تلک گئے

کچھ آبلے دیے تھے رہ آورد عشق نے

سو رفتہ رفتہ خار مغیلاں تلک گئے

پھاڑا تھا جیب پی کے مئے شوق میں نے میرؔ

مستانہ چاک لوٹتے داماں تلک گئے

Leave a Reply