Ghazlyat e Mir taqi mir
Classic,  Literature,  Urdu,  ادب,  شاعری

Ghazlyat e Mir

اب جو اک حسرت جوانی ہے

عمر رفتہ کی یہ نشانی ہے

رشک یوسف ہے آہ وقت عزیز

عمر اک بار کاروانی ہے

گریہ ہر وقت کا نہیں بے ہیچ

دل میں کوئی غم نہانی ہے

ہم قفس زاد قیدی ہیں ورنہ

تا چمن ایک پر فشانی ہے

اس کی شمشیر تیز سے ہمدم

مر رہیں گے جو زندگانی ہے

غم و رنج و الم نکویاں سے

سب تمھاری ہی مہربانی ہے

خاک تھی موجزن جہاں میں اور

ہم کو دھوکا یہ تھا کہ پانی ہے

یاں ہوئے میرؔ تم برابر خاک

واں وہی ناز و سرگرانی ہے

Leave a Reply