Ghazlyat e Mir taqi mir
Classic,  Literature,  Urdu,  ادب,  شاعری

Ghazlyat e Mir

تابہ مقدور انتظار کیا

دل نے اب زور بے قرار کیا

دشمنی ہم سے کی زمانے نے

کہ جفا کار تجھ سا یار کیا

یہ توہم کا کارخانہ ہے

یاں وہی ہے جو اعتبار کیا

ایک ناوک نے اس کی مژگاں کے

طائر سدرہ تک شکار کیا

صد رگ جاں کو تاب دے باہم

تیری زلفوں کا ایک تار کیا

ہم فقیروں سے بے ادائی کیا

آن بیٹھے جو تم نے پیار کیا

سخت کافر تھا جن نے پہلے میرؔ

مذہب عشق اختیار کیا

Leave a Reply