kalam e muattar
Urdu,  ادب,  شاعری

جانے کھویا ہوں کن عذابوں میں

ابتلاؤں میں، اضطرابوں میں

جانے کھویا ہوں کن عذابوں میں

اُس کی عادت کوئی نہ مجھ جیسی

اُسے ڈھونڈوں کیا میں خرابوں میں

اُس کی دلکش نگاہوں کا ہے نشہ

جانے اور کیا ہے اِن شرابوں میں

خُود فراموش، سدا کا خموش

کب تک ڈھونڈوں اُسے نقابوں میں

یا کوئی مجھ سے، مجھ ہی کو چھینے

یا کوئی لائے اُس کو خوابوں میں

ہوش اب کب ہے؟ تہی دامانی

کہاں چھپتی ہے ان حجابوں میں

تم نے یہ سچ کہا کہ پاگل ہوں

کون چھپتا پھرے سرابوں میں

کیا معطؔر کو معاف کرنا ہے

یا اُسے پھر رکھیں، عذابوں میں؟
۲۰ دسمبر ۲۰۱۹

کراچی

Senior writer, author, and researcher at AromaNish, specializing in Psychology with an impact on information technology. As a writer, he writes about business, literature, human psychology, and technology, in blogs and websites for clients and businesses. Enjoys reading, writing and traveling when he is not here with us...

Leave a Reply

%d bloggers like this: