Blog Poetry

حقیقت خیز تہمت ہے جوانی

جوانی
حقیقت خیز تہمت ہے جوانی
اِک آلودہ طہارت ہے جوانی
کبھی ہر لمحہ راحت ہے جوانی
کبھی ہر دم مصیبت ہے جوانی
سوادِ نقطہِ آلام ہو کر
محیطِ عیش و عشرت ہے جوانی
بقولِ بعض یارانِ جواں سال
گناہوں کی شریعت ہے جوانی
بصد ناپاکیِ احساس و افکار
بیانِ حسنِ نیت ہے جوانی
کبھی خود اپنے حق میں سمِ قاتل
کبھی داروئے ملت ہے جوانی
کبھی ہر اک نفس مصروف و مشغول
کبھی فرصت ہی فرصت ہے جوانی
نہ جانے کیوں، نہ جانے کس بنا پر
اک احساسِ ندامت ہے جوانی

Ready to get started?

Are you ready
Get in touch or create an account.

Get Started