Urdu,  ادب,  شاعری

مخزنٍ درد

زندگی کے حاصل یہ

لفظ سارے میرے ہیں

پیش لفظ

ے زندگی اک ستائے ہوے طائر کی طرح

پھڑ پھڑاتی رہی تاریخ کے زنجیروں میں

(سید مصطفیٰ حسین زیدی)

اپنے بارے میں، ایک جنگلی پرندہ ہوں۔ جس کے پاس گانا ہے اور جسے گانا ہے۔ مجھے اس سے کوئی لگاو نہیں کہ اِس جنگل میں مجھے کوئی سنتا ہے یا میں فقط خود سے مخاطب ہوں۔

مجھے لگتا ہے اِتنا ہی کافی ہے۔

معطر

 30 December 2016

Leave a Reply