Literature,  Urdu

میرے دل! بتا میں کیا ہوں؟

اپنے ہاتھوں زندگی کے لمحے خود جلا رہا ہوں
میرے دل! بتا میں کیا ہوں؟
میں اسیر ہوں تو کس کا؟
مجھے کون بتائے گا؟
مجھے کون سمجھائے گا؟
کس کے آنکھ کا آنسو ہوں؟
اور میں کس کی آبرو ہوں؟
آس ہوں میں کس کے دل کا؟
کس کے من کی آرزو ہوں؟
ہوں میں پھول یا کے خوشبو
کس کے پیار کا لہو ہوں؟
اوک ہوں یا جام و ساغر
میکدہ یا کے سُبو ہوں
مجھے کچھ پتا نہیں ہے
یا رب! کوئی تو بتا دے
مجھے راز اِس رمز کا
کوئی اپنا بھی ہے میرا
یا میں سب کا پرایا ہوں
کوئی اپنا بھی تو ہوگا
میرا سپنا بھی تو ہوگا
!میں کسے بتاؤں جانم
مجھے کچھ سمجھ نہ آئے
مجھے تیری یاد ستائے
تم بھی کچھ نہ کچھ تو بولو
خیر ہے مجھ کو زر سے تولو
باہوں میں کبھی تو آؤ
میری روح میں سماؤ
اپنے سارے دُکھ اور دردیں۔۔۔
مجھ سے لے لو اپنی خوشیاں
دےدو ہونٹوں کی صراحی
جس میں بھر دوں اپنی آتش
جس کے دم سے میرے اپنے
ہونٹ جل جل کے کچھ تو سمجھیں
عشق آتشِ دروں ہے
اپنے ہاتھوں زندگی کے
لمحے خود جلا رہا ہوں۔۔۔

Leave a Reply