Blog Literature Urdu

میرے خطوط جلا رہے ہو

میرے خطوط جلا رہے ہو

جہاں سے مجھکو مِٹا رہے ہو

لہو بھی میرا نچھوڑ لوگے

جو سرخ گنبد بنا رہے ہو

قفس میں آتش کہاں سےلاؤں

عبث ہی مجھ کو سنا رہے ہو

دی تم نے سولی کیا یہ خطا تھی

جو آنکھیں مجھ سے چُرا رہے ہو

مجھے آذادی کی آس دے کر

بڑے قفس میں بسا رہے ہو

تھی میری جتنی متاع وہ ساری

تمہی نے لوٹی چھپا رہے ہو

یہ جھوٹے وعدے،پر آخر کب تک

دل میرا یونہی بہلا رہے ہو

ملے معطر تو اس سے پوچھو

کیا اپنے دل کو بہلا رہے ہو

Last Updated on April 15, 2021 by ANish Staff

Leave a Reply