kalam e muattar
Urdu,  ادب,  بلاگ,  شاعری

مجھ سے روٹھے ہیں سب پتھر کے خدا

مجھ سے روٹھے ہیں سب پتھر کے خدا
کیسے جیتے ہیں اب آذر کے خدا
ایک کو خوش رکھوں تو پھر اور خفا
کیسے راضی ہونگے اِدھر کے خدا
میرا خوں پی کے پجاری ہوئے سیر
کیسے خوش رکھوں میں مندر کے خدا
پہلے روٹھتے تو منا لیتا اُنہیں
آج منتے نہیں یہ گھر کے خدا
کسی کا پیٹ تو کسی کی پیٹھ خالی ہے
پیٹ بھرے ہیں اہلِ نظر کے خدا
میں ہوں اس بستی کا عاجز بندہ
کیسے سمجھاؤں میں شہر کے خدا
تمہی سمجھاؤ سب بتوں کو خدا
اِن غلاموں کے شہر میں معطر کے خدا
مخزنِ درد

Senior writer, author, and researcher at AromaNish, specializing in Psychology with an impact on information technology. As a writer, he writes about business, literature, human psychology, and technology, in blogs and websites for clients and businesses. Enjoys reading, writing and traveling when he is not here with us...

Leave a Reply

%d bloggers like this: