Blog Literature Urdu

کوئی رسم بھی نہ نبھا سکا

کوئی رسم بھی نہ نبھا سکا

اپنی لاش تک نہ دفنا سکا

اپنی روشنی سے اماں کہاں

دلِ ناخدا سے گلہ نہیں

جو نہ نصیب میں تھا ملا نہیں

پھر الگ الگ ہی ہیں راستے

نہ کہیں اماں، ہے یہی جہاں

ضبط روشنی کا ستم کروں

سر بلند بغاوت کا علم کروں

اپنی جان سے کیا امان ہو

جبکہ جان میری ہی جان ہو

دلِ ہم نشیں سے ہو دلنشیں کی عطاگری

یہ ردائے ماہ و سال ہے

کیا ہجر ہے اور کیا وصال ہے

تو اے دل! دھڑکنا بھی چھوڑ دے

میرا رخ جہاں سے بھی موڑ دے

پیالے توڑدے، مئے سے جوڑ دے

کاسۂِ لب و رخسارِ یار

کیا عجب میخانے کی آڑ لیں

جامِ جم سے گر بے نیاز ہوں

ہے صد شکر محمود نہ ایاز ہوں

کوئی تخت ہے نہ ہی تاج ہے

پھر بھی کتنے دلوں پہ راج ہے

اے ازل کے شیشہ ساز تُو

میرے دل کا شیشہ تراش تُو

تُو الگ رہا میں جدا رہا

میں گر عبد ہوں تُو خُدا رہا

اے نگاہِ شیشہِ ناز تُو

بے نیاز کر بے نیاز تُو

نیمۂِ شعبان ۲۰۱۶

شب ۲ بجے

Last Updated on April 15, 2021 by ANish Staff

Leave a Reply