Blog Literature Urdu

صنمخانۂِ دل

صنمخانۂِ دل

سب نے تعمیر کیا اپنا صنمخانۂِ دل
جانے کیوں میرا رہا خالی، یہ ویرانۂِ دل
روشنی قید تھی میں نے کیا آذاد اسے
پھر بھی تاریک ہے کیوں میرا یہ آشیانۂِ دل
جذبِ باہم سے ملی مجھکو فضائے پرواز
میرا دل بھی رہا ہمراز با دیوانۂِ دل
جب سے یہ رمز کھلا مجھ پہ کہ فضائے موجود
ہے لامحدود، تب سے چھوٹا ہے میخانۂِ دل
میں اکیلا نہیں تنہا، آفتاب و مہتاب
بھی تو تنہا ہیں میرے شمعِ مستانۂِ دل
خوش نوا اتنا نہیں پھر بھی ہوں اک بلبلِ درد
نہیں معلوم مجھے آپ ہی پیمانۂِ دل
روشِ باغی محبت میں سراپا موجود
آپ کہتے ہیں کہ یہ دل نہیں پروانۂِ دل
ملے گی تم کو بھی رخصت مگر سمِ قاتل
پِلا مجھے اے معطر گر ہے فرزانۂِ دل

Leave a Reply

Ready to get started?

Are you ready
Get in touch or create an account.

Get Started