Blog Literature Urdu

شہرِ بے نور میں ٹھکانہ ہے

شہرِ بے نور میں ٹھکانہ ہے

بے چراغی کا بس بہانہ ہے

دلِ باغی ہی بس نشانہ ہے

بہرِ مظلوم تازیانہ ہے

ہر ایک قانون ظلم کا ساتھی

ہر ایک انصاف مال کا مقروض

ہر ایک جاگیر کی تہہ میں ہے لہو

ہر ایک سرمایہ ہے چُرایا ہوا

بس ایک زر ہے ہر ایک فن کا معیار

ہر ہنر زر طلب و ہے عیار

اے دلِ زندہ تم رہو ہشیار

صاف قاتل کریں لہو تیرا

کتنا ارزان ہے یہ لہو تیرا

کتنے تاریک راہوں میں اُجڑے

کتنے نازک سی باہوں سے اُجڑے

اپنے خُوں میں ہیں یہاں سب لتھڑے

کس کو قانون سے انصاف ملا؟

کسے انصاف کا الطاف نصیب؟

کسے خوابوں کا امتزاج پسند؟

کسے قانون کا ہے راج پسند؟
کسے شاعر کا یہ مزاج پسند؟

بے چراغی تو بس بہانہ ہے

دلِ باغی ہی تو نشانہ ہے

Leave a Reply

Ready to get started?

Are you ready
Get in touch or create an account.

Get Started