kalam e muattar
Urdu,  ادب,  شاعری

شامِ غم یوں بسر نہیں ہوتی

شامِ غم یوں بسر نہیں ہوتی

غمکدے میں سحر نہیں ہوتی

تنہا بلبل ہی تو چہکتا ہے

کچھ چمن پہ نظر نہیں ہوتی

وادی ذات میں بھٹکا ہوں میں

مجھکو اب کچھ خبر نہیں ہوتی

ہوں کھڑا میں تو آبشاروں میں

آرزو دربدر نہیں ہوتی

اب تماشوں سے مجھے کیا لینا

شاعری عمر بھر نہیں ہوتی

Leave a Reply