Blog Literature Urdu

زندگی

زندگی

دنیا کے غم و عیش برابر نہیں آتے

ہر روز جامِ لب بھی میسر نہیں آتے

کب تک غمِ زندان کو تنہا تنہا سہیں

ہر روز تو عُشاق کے لشکر نہیں آتے

آؤکہ لائیں ہم بھی تغیر جہان میں

ہر روز تو راہوں میں یہ پتھر نہیں آتے

کب تک رہے گا فردا و امروز کا فریب

ہر روز زندگی کا کام کیوں کر نہیں آتے

منؔصور بن کے ہم بھی کریں سیر دار کی

ہر روز نوکِ نیزہ پہ اب سر نہیں آتے

اے جوگیِٔ زمان! کہاں کھو گئے ہیں لوگ؟

ہر اک جگہ جاتے ہیں پر مندر نہیں آتے

اے جانِ تمنا! اے معطر کے جان و دل

ہر روز میرے ہاتھ میں ساغر نہیں آتے

Leave a Reply

Ready to get started?

Are you ready
Get in touch or create an account.

Get Started